لاہور ہائیکوٹ کے فیصلے کے بعد عبدالعلیم خان کا بڑا اعلان!جان کر اپوزیشن بھی سر جوڑ کر بیٹھ جائینگی

لاہور(مانیٹرنگ نیوز‘صحافی ڈاٹ کام‘ ویب ڈیسک) تحریک انصاف کے رہنماء سابق سینئر صوبائی وزیر عبدالعلیم خان نے کہا ہے کہ آج اللہ تعالیٰ نے مجھے سرخرو کیا، پارٹی کارکنوں اور میرے لیے دعائیں کرنے والوں کا شکریہ،جنہوں نے میرے خلاف سازش کی اللہ انہیں بے نقاب کریگا،میں اپنا فیصلہ اللہ کی عدالت پر چھوڑتا ہوں ‘ وہی بہترین انصاف کرنے والا ہے۔وائس آف ایشیا کے مطابق لاہور ہائیکورٹ کا فیصلہ آنے کے بعد پنجاب اسمبلی کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے علیم خان نے کہا کہ میرا مقصد کوئی وزارت لینا ہرکز نہیں تھا۔ کسی بھی لالچ کے بغیر عمران خان کا ساتھ دیا۔ مجھے فخر ہے کہ میں نے عمران خان کاساتھ نئے پاکستان کے لیے دیا۔ روزے سے کہہ رہا ہوں کہ میرا لیڈر عمران خان ایماندار اور ملک کی امید ہے۔ علیم خان نے کہا کہ نیب قانون میں سقم موجود ہیں جنہیں ختم ہونا چاہیے حکومت سے کہتا ہوں کہ وہ اس معاملے کو دیکھے۔انہوں نے کہا کہ میرے خلاف انکوائریز 2018ء سے چل رہی ہیں اور مجھے 2019ء میں گرفتار کیا گیا اور ابھی تک نیب کے پاس کوئی ثبوت اور گواہ نہیں ہے۔اگر گواہ نہیں تھے تو 100دن کس جرم میں قید رکھا گیا۔نیب کو چاہیے کہ پہلے گواہ اور ثبوت جمع کریں پھر گرفتار کریں پھر عدالت فیصلہ کرے کہ مجرم ہے یا نہیں۔انہوں نے کہاکہ کرپشن کے خلاف زیرو ٹالرنس پالیسی ہونی چاہیے۔ نیب قوانین سخت ہونے چائیں لیکن نیب قانون میں جو سقم ہیں انہیں دور کیا جائے۔انہوں نے کہا کہ میں پوچھتا ہوں کہ مجھے بتائیں مجھے کس بنیاد پر چار ماہ قید رکھا گیا۔علیم خان نے کہا کہ جنہوں نے میرے خلاف سازش کی اللہ انہیں بے نقاب کریگا،میں اپنا فیصلہ اللہ کی عدالت پر چھوڑتا ہوں، وہی بہترین انصاف کرنے والا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں