خدارا بجٹ کو سیاسی رنگ نہ دے اور نہ ہمیں جھوٹا کہے

اسلام آباد(مانیٹرنگ نیوز‘ ویب ڈیسک‘ صحافی ڈاٹ کام)وفاقی وزیر خزانہ شوکت ترین نے کہا ہے کہ عوام کو جو خواب دکھائے ان کی تعبیر کی طرف جارہے ہیں،اپوزیشن بجٹ کو سیاسی رنگ نہ دے اور نہ ہمیں جھوٹا کہیں،سابق دور حکومت اگر اتنا ہی سہانا تھا تو 20ارب ڈالر خسارہ کیوں ہوا؟ ہمارے پاس ڈالر چھاپنے کی مشین نہیں تھی، اسلئے آئی ایم ایف جانا پڑا، سابق حکومتوں نے جو کچھ کیا سب جانتا ہوں، بجٹ پر بلاوجہ تنقید نہ کی جائے، کھانے پینے کی اشیا اس لئے مہنگی ہوئیں کیونکہ ہمارے پاس گندم چینی پوری نہیں تھی، 70فیصد دالیں ہم درآمد کرتے ہیں، پچھلے 20سالوں میں زراعت میں کچھ نہیں کیا گیا تھا جسکے ذمہ دار ہم نہیں۔پیرکوقومی اسمبلی میں خطاب کرتے ہوئے وزیر خزانہ شوکت ترین نے کہا کہ خسارے بڑھے اسی لیے آئی ایم ایف کے پاس جانا پڑا، نوٹ چھاپ کر مسائل حل نہیں ہوسکتے، عمران خان نے ایسے اقدامات اٹھائے جس سے معیشت کو فائدہ ہوا۔انہوں نے کہا کہ اس وقت جو اسٹریٹیجی ہے اس میں غریب کے ساتھ سب کا خیال رکھا جائے گا، مہنگائی ساڑھے 11فیصد ہے 25فیصد تو نہیں، اپوزیشن کی جانب سے جھوٹ نہ بولا جائے مہنگائی 25فیصد ہے۔وزیر خزانہ نے بتایا کہ اپوزیشن موجودہ بجٹ کو سیاسی رنگ نہ دے اور نہ ہمیں جھوٹا کہیں۔ کھانے پینے کی اشیا اس لئے مہنگی ہوئیں کیونکہ ہمارے پاس گندم چینی پوری نہیں ہے،اس کے علاوہ 70فیصد دالیں امپورٹ کرتے ہیں۔ پچھلے 20سالوں میں ایگری کلچر میں کچھ نہیں کیا گیا تھا۔زراعت کے شعبے میں گزشتہ دس سالوں میں کیا کیا گیا؟، اشیائے خوردونوش درآمد کرتے ہیں، عالمی سطح پر چیزیں مہنگی ہیں ہمیں بھی نقصان ہورہا ہے، دنیا بھر میں زرعی اجناس کی قیمتوں میں بہت تیزی سے اضافہ ہوا لیکن ہم نے بجٹ میں غریبوں کے ساتھ ملکی صنعتوں اور زرعی شعبے کا بھی خیال رکھا۔ شوکت ترین نے کہا کہ چھوٹے قرضے دیں گے تو پروڈکشن بڑھے گی، برآمد میں جتنے بھی ٹیکسز تھے انہیں کم یا ختم کردیا ہے، ہم نے برآمدات بڑھانی ہے، ڈالر چھاپ نہیں سکتے۔انہوں نے کہا کہ خصوصی اقتصادی زونز میں چینی سرمایہ کاری لائیں گے، چینی سفیر سے آج ملاقات ہوئی انہیں بھی کہا برآمدات میں ہماری مدد کریں۔وزیر خزانہ نے کہا کہ موجودہ حکومت کو کریڈٹ دیں آج سارے بینک گھروں کے لیے قرضے دینے کو تیار ہیں، ہماری ہاؤسنگ انڈسٹری مشکلات کا شکار تھی کیسے ترقی کرسکتے ہیں، عمران خان نے ہاؤسنگ انڈسٹریز پر توجہ دی،ہاؤسنگ انڈسٹری ٹیک آف کرے گی۔ ہاؤسنگ انڈسٹری چلنے سے 40 انڈسٹریز چلیں گی،احساس پروگرام دنیا میں چوتھے نمبر پر آیا ہے،عمران خان کو کچھ تو کریڈٹ دے دیں بہت سے مسائل پر خصوصی توجہ دی۔انہوں نے کہا کہ اب ہم گروتھ کی طرف جا رہے ہیں۔ غریب لوگ پہلے خواب دیکھتے تھے، ہم اب نہیں تعبیر دینے جا رہے ہیں۔ اس حوالے سے 24 جون کو تفصیلی تقریر کروں گا۔وزیر خزانہ نے کہا کہ ہم ایگری کلچر پر کام کر رہے ہیں۔ کسانوں کوقرض دیں گے توپروڈکشن بڑھے گی۔ ہم لوکل انڈسٹری کو پاں پر کھڑا کریں گے۔ ہم نے آئی ٹی کی ایکسپورٹ بھی بڑھانی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں