سحری سے قبل……. میدان جنگ بن گیا!

کراچی (مانیٹرنگ نیوز‘صحافی ڈاٹ کام‘ ویب ڈیسک)سحری سے قبل گارڈن کا علاقہ میدان جنگ بن گیا علاقے میں کرکٹ میچ کے دوران 50 سے زائد افراد کے درمیان ہونیوالے جھگڑے کے دوران پولیس بھی بیچ میں کود پڑی فائرنگ،لاٹھی،ڈنڈوں اور پتھراؤ کے آزادانہ استعمال کے نتیجے میں ایک شہر ی گولی لگنے سے زخمی،آئی این پی کے مطابق دو پولیس اہلکاروں سمیت متعدد افراد لہولہان،ایس ایس پی سٹی نے واقع کی تحقیقات کا حکم دیدیا،5 پولیس اہلکار زیر حراست،مقدمہ درج 10 سے زائد افراد نامزد،تفصیلات کے مطابق منگل کو گارڈن کے علاقے کشتی چوک کے قریب رمضان المبارک کے دوران ہر سال کی طرح اس سال بھی نائٹ کرکٹ میچ کھیلا جارہا تھا کہ میچ کے دوران 50 سے زائد افراد کے درمیان جھگڑے ہوتے ہی ایک دوسرے پر لاٹھی،ڈنڈے اور پتھراؤ کا آزادانہ استعمال شروع کردیا تاہم اطلاع ملنے پر پولیس پارٹی نے موقع پر پہنچ کر مشتعل افراد کو منتشر کرنے کیلئے فائرنگ کردی جبکہ فائرنگ کے نتیجے میں سر پر گولی لگنے سے 45 سالہ قیوم ولد اسماعیل شدید زخمی ہوگیا جسے فور ی طور پر طبی امداد کیلئے سول اسپتال پہنچایا گیا تاہم پتھراؤ کی زد میں آکر وہ پولیس اہلکار ASI جہانزیب اور کانسٹیبل شہزاد لہولہان ہوگئے جنہیں طبی امداد کیلئے سول اسپتال منتقل کیا گیا تاہم واقع کی اطلاع ملنے پر پولیس کی اضافی نفری نے پہنچ کر صورتحال پر قابوپالیا فائرنگ کی زد میں آکر ایک شخص کے زخمی ہونے کے خلاف علاقہ مکینوں کی جانب سے شدید احتجاج کیا گیا جس پر ایس ایس پی سٹی مقدس حیدر نے واقعہ کا نوٹس لیتے ہوئے واقع کی فوری تحقیقات کا حکم دیدیا ایس ایس پی سٹی مقدس حید ر نے کہا کہ گارڈن کے علاقے میچ کے دوران جھگڑا ہو افائرنگ اور پتھراؤ سے ایک شخص اور دو پولیس اہلکار زخمی ہوئے لڑائی کے دوران مشتعل افراد کو منتشر کرنے کے لیے پولیس نے ہوائی فائرنگ کی،ابھی اس بات کا تعین نہیں ہوا کہ شہری پولیس اہلکاروں کی فائرنگ زخمی ہوا یا کسی اور وجہ سے زخمی ہوا واقع کی مکمل تحقیقات کی جائے گی موقع پر پہنچنے والے پولیس اہلکاروں کا ریکارڈ جمع کرایا ہے۔واضح رہے کہ ایس ایس پی سٹی مقد س حید ر کے حکم پر زخمی شخص کے بھتیجے کی مدعیت میں گارڈن تھانہ میں 10 سے زائد افراد کو نامزد کرتے ہوئے مقدمہ درج کرلیا گیا اور 5 پولیس اہلکاروں کو بھی حراست میں لیکر تحقیقات شروع کردی گئی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں