فضائل رمضان المبارک کتاب۔فضائل اعمال۔۔(قسط نمبر5)

نبی کریم ﷺ کا ارشاد ہے کہ رمضان المبارک کی ہر شب و روز میں اللہ کے یہاں سے (جہنم کے) قیدی چھوڑے جاتے ہیں اور ہر مسلمان کے لئے ہر شب و روز میں ایک دعا ضرور قبول ہو تی ہے‘(ف) بہت سی روایات میں روزے دار کی دعا کا قبول ہونا وارد ہوا ہے‘بعض روایات میں آتا ہے کہ افطار کے وقت دعا قبول ہو تی ہے مگر ہم لوگ اس وقت کھانے پر اس طرح گرتے ہیں‘کہ دعا مانگنے کی تو کہاں فرصت‘ خود افطار کی دعا بھی یاد نہیں رہتی‘ افطار کی مشہور دعا یہ ہے‘ (ترجمہ) اے اللہ تیرے ہی لئے روزہ رکھا اور تجھی پر ایمان لایا ہوں اور تجھی پر بھروسہ ہے تیرے ہی رزق سے افطار کر تا ہوں‘حدیث کی کتابوں میں یہ دعا مختصر ملتی ہے‘

حضرت عبداللہ بن عمرو بن عاص ؓ افطار کے وقت یہ دعا کرتے تھے‘ (ترجمہ) اے اللہ تیری اس رحمت کے صدقے جو ہر چیز کو شامل ہے یہ مانگتا ہوں کہ تو میری مغفرت فرما دے‘ بعض کتب میں خود حضور ؐ سے یہ دعا منقول ہے‘(ترجمہ) برائے وسیع عطا والے میری مغفرت فرما اور بھی متعدد دعائیں روایات میں وارد ہوئی ہیں مگر کسی دعا کی تخصیص نہیں اجابت دعا کا وقت ہے اپنی اپنی ضرورت کیلئے دعا فرما ویں‘ یاد آجاوے تو اس سیاہ کا ر کو بھی شامل فرما لیں کہ سائل ہوں اور سائل کا حق ہو تا ہے۔ ”چشمہ فیض سے گر ایک اشارا ہو جائے۔۔لطف ہو آپ کا اور کام ہمارا ہو جائے“۔

Sahafe.com

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں