حمزہ شہباز کی تکلیفوں کے دن بڑھ گئے‘عدالت سے بڑی خبر سامنے آ گئی!

لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک‘ویب ڈیسک‘ صحافی ڈاٹ کام)احتساب عدالت نے منی لانڈرنگ اور آمدن سے زائد اثاثہ جات کیس میں پنجاب اسمبلی میں قائد حزب اختلاف حمزہ شہباز کامزید 14 روزہ جسمانی ریمانڈ منظور کرتے ہوئے 4 ستمبر کو دوبارہ پیش کرنے کا حکم دیدیا۔احتساب عدالت کے ڈیوٹی جج نعیم ارشد نے کیس کی سماعت کی۔نیب پراسیکیوٹر حافظ اسد اللہ نے حمزہ شہباز کے مزید 15 روزہ جسمانی ریمانڈ کی استدعا کی جس کی حمزہ شہباز کے وکیل امجد پرویز نے مخالفت کی۔ نیب نے موقف اپنایا کہ حمزہ شہباز کے اکاؤنٹ میں لاکھوں ڈالر کی رقوم ایسے افراد کے ذریعے بھجوائی گئیں جن کے ابھی پاسپورٹ بھی نہیں بنے تھے۔رانا ظہیر فیصل آباد میں کپڑے کی دوکان پر ملازم ہے جس کا پاسپورٹ بھی نہیں بنا لیکن اس نے لندن سے حمزہ کو ایک لاکھ ڈالر بھجوائے۔آفتاب احمد اور شاہد رفیق منی لارڈنگ کیس میں وعدہ معاف گواہ بن چکے ہیں۔ملزم آفتاب،عثمان انٹرپرائز زکے فرضی ناموں سے پیسے شریف خاندان کے افراد کے اکاؤنٹ میں بھجواتا رہا۔ملزم کا کہنا ہے کہ ہم ان سے پاکستان سے پیسے وصول کرتے تھے۔عدالت نے نیب سے استفسار کیا کہ حمزہ شہباز کہہ رہے ہیں میں تو انہیں جانتا بھی نہیں۔ نیب نے اس کیلئے مکمل تفتیش کی ہے،ٹیلی گراف ٹرانسفر کو کوئی قانون تو تحفظ دیتا ہے،بتائیں اس پر قانون کیا کہتا ہے۔ نیب کی جانب سے موقف اپنایا گیا کہ جی بالکل ہے۔امجد پرویز ایڈووکیٹ نے کہا کہ آپ ان سے یہ مت پوچھیں کہ تفتیش کیسے کی بلکہ آپ اصل بات تک پہنچ گئے ہیں کہ نیب کا کیس کیا ہے۔ حمزہ شہباز نے کہا کہ میں ایک پاکستانی ہوں،مجھے بتائیں میں نے کرپشن کی ہے تو یہ مسکرا دہتے ہیں،ان کے پاس جواب نہیں لیکن اللہ سے امید کے انصاف ملے گامیرا دامن صاف ہے۔عدالت نے کہا کہ آپ نیب کو تھوڑا سا جسٹیفائی کریں۔میں جوتشی نہیں لیکن یہ قیامت تک کوشش کرتے رہیں لیکن کامیاب نہیں ہوں گے۔عدالت نے فریقین کے دلائل سننے کے بعد حمزہ شہباز کا مزید 14 روزہ جسمانی ریمانڈ منظورکرتے ہوئے 4 ستمبر کو دوبارہ پیش کرنے کا حکم دیدیا۔صحافیوں سے غیر رسمی گفتگو کرتے ہوئے حمزہ شہباز نے کہا کہ ظلم جب بڑھتا ہے تو مٹ جاتا ہے۔ اب تو ظلم کرنے والوں پر ترس آرہا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں