اپوزیشن کا ارکان پارلیمنٹ کی گرفتاری اور اسپیکر کے رویئے کیخلاف بڑا اقدام!

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک‘ویب ڈیسک‘ صحافی ڈاٹ کام)اپوزیشن جماعتوں نے اپنے ارکان پارلیمنٹ کی گرفتاری اور اسپیکر کے رویئے کے خلاف پارلیمنٹ ہا وس کے باہراحتجاجی کیمپ لگا کر شدید احتجاج کیا اور اسپیکر قومی اسمبلی استعفی دو کے نعرے بھی لگائے،احتجاجی کیمپ سے خطاب کرتے ہوئے اپوزیشن رہنما وں نے کہا کہ اگر پروڈکشن آرڈر جاری نہیں کیئے جاتے تو ہم عدالتوں سے رجوع کریں گے،ملک میں جمہوریت پر حملے ہو رہے ہیں، پارلیمنٹ کا ادارہ مقتدر ادارہ ہے،اسپیکر کے رویئے سے پارلیمنٹ کی اتھارٹی کمزور ہو رہی ہے، نمائندوں کو نمائندگی سے محروم رکھا جارہا ہے، مشرف کے زمانے میں بھی ایسا نہیں ہوا جو آج ہو رہا ہے،ہم اپنے حقوق کے لیئے لڑیں گے، ہمارے تمام اسیر ارکان کو اسمبلی میں لایا جائے۔ان خیالات کا اظہار اپوزیشن رہنما خواجہ آصف اور نوید قمر نے کیا۔جمعرات کو پارلیمنٹ ہا وس کے باہر مسلم لیگ ن اور پیپلز پارٹی نے اپنے رہنماں کی گرفتاری کے خلاف احتجاجی کیمپ لگایا جس میں نواز شریف، خواجہ سعد رفیق،اصف علی زرداری،شاہد خاقان عباسی اور رانا ثنااللہ کی تصاویر رکھی گئی تھیں جبکہ پوسٹرز پر قیدی برائے سیاسی تاوان، بے گناہ سیاسی قیدیوں کو رہا، مریم نواز شریف کو رہا کرو، کے نعرے درج تھے، خواجہ آصف نے کہا کہ اسپیکر قومی اسمبلی نے اسیر ارکان پارلیمنٹ کے پروڈکشن آرڈر جاری نہ کرکے ان کو حق نمائندگی سے محروم کیا ہے،سینیٹ میں اسیر ارکان کو لایا جارہا ہے وہ حق نمائندگی ادا کر رہے ہیں، خواجہ آصف نے کہا کہ پارلیمنٹ کا ادارہ مقتدر ادارہ ہے، اسپیکر کے رویئے سے پارلیمنٹ کی اتھارٹی کمزور ہو رہی ہے، ان اقدامات سے اسپیکر کا حلف مجروح ہو رہا ہے، جاری اجلاس کے دوران خورشید شاہ کو گرفتار کیا گیا، اسپیکر ان کی گرفتاری سے لاعلم تھے، خواجہ آصف نے کہا کہ ارکان کا استحقاق ہے اپنے حلقوں کی نمائندگی کرنے کا، ان کا حق چھینا جارہا ہے،ایسے قدامات 72 سالوں میں بہت سے لوگوں نے کیئے وہ آج نہیں رہے،ملک میں جمہوریت پر حملے ہو رہے ہیں، مسائل کو اجاگر کرنیکا موقع پارلیمنٹ میں نہ ملا تو ہمیں ایسے کیمپ لگانے پڑیں گے، اسپیکر نمائندگی کا حق نمائندوں سے نہ چھینیں، خواجہ آصف نے کہا کہ ہمیں نمائندگی کے حق سے کسی صورت محروم نہیں کیا جا سکتا،اسپیکر کے یہ اقدامات آئین سے ماورا ہیں، خواجہ آصف نے کہا کہ اگر پروڈکشن آرڈر جاری نہیں کیئے جاتے تو ہم عدالتوں سے رجوع کریں گے دو تین دنوں میں یہ سلسلہ شروع ہو جائے گا، انہوں نے کہا کہ قانون سازی آرڈیننس کے ذریعے ہو رہی ہے، الیکشن کمیشن میں بہت سے کیسز ہیں جن کی شنوائی نہیں ہو رہی جن میں فارن فنڈنگ کا کیس بھی ہے، خواجہ آصف نے کہا کہ اس حکومت کی اپنی ناکامیاں ہیں،پاکستان پیپلز سید پارٹی کے رہنما نویدقمر نے کہا کہ خورشید شاہ کو گرفتار کرنے سے ریکارڈ بن گیا اتنے ارکان پہلے کبھی گرفتار نہیں ہوئے، یہ تاریخ کی بدترین مثال ہے، نمائندوں کو نمائندگی سے محروم رکھا جارہا ہے، مشرف کے زمانے میں بھی ایسا نہیں ہوا جو آج ہو رہا ہے، اتنے لوگوں کو گرفتار کر کے اسمبلی میں نہ لانا یہ پہلی مرتبہ دیکھ رہے ہیں، ضیا الحق نے کوڑے لگائے، جیلوں سے ڈرنے والے کوئی نہیں ہیں، نوید قمر نے کہا کہ میڈیا ٹرائل کا نیا سلسلہ شروع ہوا ہے،مہنگائی کا طوفان حکومت نے برپا کیا ہوا ہے،لوگ آپ کے خلاف اٹھیں گے تو آپ کو پتہ بھی نہیں چلے گا، ظلم کا دفاع کوئی نہیں کرے گا،مخالفین کو جنہوں نے بھی ختم کرنے کی کوشش کی وہ خود ختم ہوگئے، ایک کے بعد ایک رکن کو گرفتار کیا جارہا ہے، آپ نے اسمبلی کو مفلوج کر کے رکھ دیاہے کوئی بات یہاں ہو ہی نہیں سکتی، ہم اپنے حقوق کے لیئے لڑیں گے، ہمارے تمام اسیر ارکان کو اسمبلی میں لایا جائے۔احتجاجی کیمپ میں مریم اورنگزیب،خواجہ آصف،طاہرہ اورنگزیب،مرتضی جاوید عباسی،سردار ایاز صادق،نوید قمر،رانا تنویر شائستہ پرویز،مہرین رزاق بھٹو،شزا فاطمہ خواجہ،شازیہ مری سید حسین طارق سمیت اپوزیشن جماعتوں کے پارلمنٹیرینز نے بڑی تعداد میں شرکت کی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں