آصف زرداری بچ نکلنے میں کامیاب!

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک‘ویب ڈیسک‘ صحافی ڈاٹ کام) اسلام آباد ہائیکورٹ نے سابق صدر آصف علی زرداری کی5 مقدمات میں عبوری ضمانتوں میں توسیع کر دی۔اسلام آباد ہائیکورٹ کے جج جسٹس عامر فاروق کی سربراہی میں دو رکنی بینچ نے آصف زرداری کی ضمانتوں کی 7 درخواستوں پر سماعت کی۔عدالت 5 ضمانتوں کی درخواستوں پر سماعت کر رہی تھی تاہم آج آصف زرداری کی جانب سے مزید دو درخواستیں دائر کی گئیں۔سابق صدر کی جانب سے دائر درخواستوں میں موقف اختیار کیا گیا کہ نیب نے کل ہریش کمپنی کیس میں طلب کیا ہے اور گرفتاری کا خدشہ ہے، اس لیے نیب کو گرفتاری سے روکا جائے اور ضمانت منظور کی جائے۔سماعت کے دوران آصف زرداری کے وکیل فاروق ایچ نائیک نے کہا کہ نئے نئے طلبی کے نوٹسز آرہے ہیں جس پر جسٹس عامر فاروق نے ریمارکس دیے یہ تو لگتا ہے طلبیوں اور ضمانتوں کا سیلاب آرہا ہے۔جسٹس عامر فاروق نے ریمارکس دیے کہ مقدمات بہت زیادہ ہو گئے ہیں ان کی مکمل فہرست تیار کی جائے اور تمام درخواستوں کو ترتیب دیا جائے، جسٹس عامر فاروق نے نیب سے استفسار کیا کہ ضمانت کی نئی درخواستوں پر جواب کے لئے نیب کو کتنا وقت چاہئے۔ نیب پراسیکوٹر نے کہا کہ ہر آئے روز یہ نئی درخواست لے آتے ہیں، پرانی ضمانت کی درخواستوں پر عدالت پہلے فیصلہ سنائے جب کہ جن درخواستوں پر ہمارا جواب آچکا ہے ان پر فیصلہ سنایا جائے۔فریقین کے دلائل سننے کے بعد عدالت نے سابق صدر آصف زرداری کی 5 مقدمات کی عبوری ضمانتوں میں توسیع کردی جب کہ مزید 2 کیسز میں ضمانت منظور کرلی گئی، عدالت نے پارک لین کیس میں آصف زرداری کی ضمانت میں 12 جون جب کہ ہریش کمپنی کیس میں 29 مئی تک توسیع کردی۔یاد رہے کہ اسلام آباد ہائیکورٹ نے 29 اپریل کو آصف زرداری کی درخواست پر ان کے خلاف نیب میں زیر تفتیش تمام کیسز کی تفصیلات طلب کی تھیں جس پر نیب کی جانب سے 14 مئی کو ایک رپورٹ پیش کی گئی۔نیب نے عدالت کو بتایا کہ سپریم کورٹ کے حکم پر جعلی بینک اکانٹس کی انکوائریز کی ہیں اور مجموعی طور پر 26 انکوائریز اور انویسٹی گیشنز جاری ہیں جن میں 5 انکوائریز اور 3 انویسٹی گیشنز میں آصف زرداری کا کردار سامنے آیا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں