مہنگی چینی درآمد کرنے والوں کیخلاف شکنجہ تیار

اسلام آباد(مانیٹرنگ نیوز‘ ویب ڈیسک‘ صحافی ڈاٹ کام)وفاقی وزیر خزانہ شوکت ترین نے کہاہے کہ چینی کی درآمد میں تاخیر اور مہنگی چینی درآمد کرکے قومی خزانے کو نقصان پہنچانے والوں کے خلاف کارروائی کی جائے گی، صوبوں کی جانب سے چینی کی مقرر کردہ 89.75 روپے فی کلو گرام قیمت اور درآمدی چینی کی فی کلو لاگت میں پائے جانے والے فرق کا بوجھ وفاقی حکومت برداشت کرے گی۔28ستمبر کو وفاقی کابینہ کے اجلاس کے منٹس پر مشتمل دستاویز کے مطابق نجی ٹی وی نے دعویٰ کیا کہ اقتصادی رابطہ کمیٹی کے فیصلوں کی توثیق کے لئے پیش کی جانے والی سمریوں پر تبادلہ خیال کے دوران وفاقی کابینہ کے اراکین کی جانب سے اس بات کی نشاندہی کی گئی کہ چینی کی درآمد میں تاخیر اور مہنگی چینی درآمد کرکے قومی خزانے کو بھاری نقصان پہنچایا گیا ہے، اجلاس میں کابینہ اراکین کی جانب سے دیر اور مہنگی چینی درآمد کرکے قومی خزانے کو نقصان پہنچانے والوں کا تعین کرکے ان کے خلاف کاروائی کرنے کا مطالبہ کیا گیا جس کے جواب میں وفاقی وزیر خزانہ شوکت ترین کابینہ اراکین کو بتایا کہ دیر سے چینی درآمد کرنے اور مہنگی چینی درآمد کرکے قومی خزانے کو نقصان پہنچانے کے معاملے کی انکوائری جاری ہے۔وزیر خزانہ شوکت ترین نے کابینہ اراکین کو یقین دہانی کروائی کہ دیر سے چینی درآمد کرنے اور مہنگی چینی درآمد کرکے قومی خزانے کو نقصان پہنچانے کے ذمہ داروں کا تعین کیا جائے اور ان کے خلاف کارروائی کی جائے گی، وزیر خزانہ نے کابینہ اراکین کو یہ بھی بتایا کہ صوبوں کی جانب سے چینی کی مقرر کردہ 89.75 روپے فی کلو گرام قیمت اور درآمدی چینی کی فی کلو لاگت میں پائے جانے والے فرق کا بوجھ وفاقی حکومت برداشت کرے گی۔اجلاس میں اس بات کی بھی نشاندہی کی گئی کہ قومی سطع پر چینی کی 70فیصد کھپت بسکٹ بنانے والی بیکریوں، بیوریجز انڈسٹری، گولیاں ٹافیاں و کینڈی بنانے والی انڈسٹریز استعمال کررہی ہیں اور باقی ماندہ صرف 30چینی عام عوام استعمال کررہی ہے جبکہ سبسبڈی سب لے رہے ہیں، اجلاس میں تجویز دی گئی کہ چینی پر سبسڈی صرف عام عوام تک محدود کی جائے، یہ بھی تجویز دی گئی کہ وفاقی سیکرٹری صنعت و پیداوار،سیکرٹری فوڈ سیکورٹی اینڈ ریسرچ مل کر ایسا میکنزم متعارف کروائیں جس کے ذریعے صرف 30فیصد چینی استعمال کرنے والے عام عوام کو سبسڈی دی جاسکے اور کمرشل صارفین کو چینی پر سبسڈی نہ دی جاسکے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں